Maawara Hai Muhabbat

!!سنو
…وہ چیز کیا ہے
…وہ لمحہ کیا ہے
..جسے تم محبّت کہتے ہو
..جسے سب محبّت کہتے ہیں
..اور گمان بھی کبھی کبھی یقین لگتے ہیں
..محبّت تو امر ہوتی ہے
..محبّت تو سفر ہوتی ہے
..گمان سے پاک! یقین کا سفر
! لیکن سنو
!!ایسا کیسے ممکن ہو کہ ہم کس راہ کے مسافر ہیں
..راہِ گماں یا منزلِ یقین کے
..بتاؤ ! آخر کچھ تو
..ہاں مجھے یاد ہے
,,تم نے بہت کچھ کہا تھا
,,کئ کومل، نازک، جذبوں کو الفاظ سے مزین کیا تھا تم نے
..ہاں تم نے کہا تھا
..شدّت، جدّت، راحت، عبارت
..ساز آواز
.. درد اور  دوا
..میں اور تم
..محبّت ہی تو ہے
…پھرتم تھک گئے تھے
..بولتے بولتے یا پھر دوڑتے دوڑتے
..ایک لمحہ کے سکوت کے بعد
..اچانک پوچھا پھر  مجھ سے
محبّت  کیا  ہے” ؟”
..اور مجھے یاد ہے ہاں
..وہ لمحہ یاد ہے
..جب پل بھر کیلئے رک گئ تھی ہر تصویرِ کائنات
..میرے سینے میں اِک درد تھا
..میری رگوں میں ایک کرب تھا
..میں نے کہا تھا
..محبّت ہر کسی کا اپنا تجربہ ہے
..میری نظر میں
..محبّت ایک پاس ہے
..تکمیل کا اِک احساس ہے
..کہ اپنی محبّت بنا یہ کائنات تو کیا
..اپنا آپ ادھورا لگے
..پیاسا بھی لگے من
..یہ تو صحرا کا وہ خود رو پودا ہے
..جسے موسموں کی شدتیں بھی نہیں مارتیں
..اب ہمارا تجربہ کیسا ہو
..ہمارے اختیار میں کہاں
..میں نے اور بھی بہت کچھ کہا تھا
..لیکن
..لفظوں اور لمحوں کے اتنے ضیا کے بعد مجھے لگا  کہ
..محبّت دلوں میں موجود وہ جزبہ ہے
..جو الفظ کی گرفت سے
..ماورا ہے
..ماورا ہے

تحریر : طیبہ اِرّم

Sunoo !
Woh Cheez Kia Hai ..
Woh Lamha Kia Hai ..
Jisse Tum Muhabbat Kehtey Ho ..
Jisse Sab Muhabbat Kehtey Hain ..
Aur Gumaan Bhi Kabhi Kabhi Yakeen Lagtey Hain ..
Muhabbat Toa Amar Hoti Hai ..
Muhabbat Toa Safar Hoti Hai ..
Gumaan Se Paak ! Yaqeen Ka Safar ..
Lekin Sunoo !
Aisa Kaisey Mumkin Ho Ke Hum Kiss Rah Ke Musaafir Hain ..
Rah-e-Gumaan Ya Manzil e Yakeen K ..
Bataaoo ! Aaakhir Kuch Toa ..
Haan Mujhey Yaad Hai ..
Tum Ne Buhat Kuch Kaha Tha ..
Kaye Komal , Nazuk ,Jazboon Ko Alfaaz Se muzayyan Kia Tha Tum Ne …
Han Tumne Kaha Tha ..
Shiddaat , Jiddat , Rahaat , Ibaarat..
Saaz Aawaaz ..
Dard Aur Dawa ..
Mein Aur Tum ..
Muhabbat He Toa Hai ..
Phir Tum Thak Gaye Thea ..
Bolte Bolte Ya Phir Daurtey Daurtey ..
Ek Lamha K Sakoot K Baad …
Achanak Poocha Phir Mujse …
” Muhabbat Kia Hai  ? ”
Aur Mujhe Yaad Hai ..

Haan ..
Woh Lamha Yaad Hai ..
Jab Pal Bhar K Liye Rukh Gayi Thi Har Tasveer e Kainaat ..
Merey Seeney Mein Ek Dard Tha ..
Meri Ragoon Mein Ek Qarb tha ..
Meinne Kaha Tha ..
Muhabbat Har Kissi Ka Apna Tajurba Hai ..
Meri Nazar Mein ..
Muhabbat Ek Paaas Hai ..
Takmeeel Ka Ek Ehsaaas Hai ..
Ke Apni Muhabbat Bana Ye Kainaat Toa Kia ..
Apna Aaap Adhoora Lagey ..
Pyasa Bhi Lagey Mann ..
Ye Toa Sehra Ka Wo Khud Ru Pauda Hai ..
Jisse Mausamoo Ki Shiddatain Bhi Nahi Maarti ..
Abh Humara Tajurba Kaisa Ho? …
Humarey Ikhtiyaar Mein Kahan ..
Meinne Aur Bhi Buhat kuch Kaha Tha ..
Lekin !!
Lafzoon Aur Lamhoon K Itney Ziyaa K Baad Mujhe Laga Ke ..
Muhabbat Diloon Mein Maujood Woh Jabza Hai ..
Joa Alafz Ki Garift Se ..
Maawara Hai ..
Maawara Hai …

Written by : Tayyiba Iram

Advertisements

One Response to Maawara Hai Muhabbat

  1. amaraahmed says:

    Bhot Khubsuraat Alfaz!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s