Feelings Of “Feelings” By Tayyiba Iram

Aaj Raat Khayal Ke Badal Se Jab Ehsaas Ki Barish Hui …

Meri Mulaqaat Bhi Ek Pagal Panchchi Se Hui …

Us kay Sath Thay Us k Sathi..

Sab Ke Sab Ke Sab Anjaaney Thay..

Per Mujhko Yeh Mehsoos Hua Woh Sab Janey Pehchaney Thay..

Meray Mann Ka Pinjirah Khoola ..

Panchchi Yakdam Mujhse Bola ..

Aaa ! Mein Tujhko Dikhlaoon ..

Kuch Ehsaasaat Se Milwaoon ..

Woh Ehsaasaat Mujassim Thay..

Honthoon Pe In kay Tabassum Tha

Aankhain Inki Udaaas Thi ..

Jesey Kuch Inko Aaas Thi ..

Ek Ek Ka Chehra Yaad Nahi ..

Bas Itna Mujhko Yaad Hai ..

Inke Kuch Ehsaaas Bhi Thay ..

In kay Kuch Armaaan Bhi Thay ..

Muhabbat Ki Ankhoon Mein Aansoo Bhi Thay..

Manind Lahoo Wo Aansoo He Thay ..

Kuch Kaha Nahi Bas Woh Khamoosh Thi …

Magar Yun Laga Woh Toa Nirdosh Thi ..

Chahat Ko Chahat Se Chahat Bhi Thi ..

Magar Kuch Bhi Kehne Ki Sa’aat Na Thi ..

Yehan Ek Ghari Isko Rahat Na Thi ..

Jo Dekha Aaage Tha Aansoo Khara ..

Tha Jesey Khizaan Mein Patta Jharra ..

Giley Sarey Isko Chahat Se Thay ..

Aur Aankhoon Mein Iski Aanso He Thay ..

Kaha Usne Sanmbhal Jar Mujse Yun ..

Muhabbat Ko Mujhse Adawat Hai Kyun ?

Koi Dil Jo Isko Pa Jata Hai ..

Mujhey Woh Na Paye Toa Kia Jata Hai?

Muhabbat Yeh Boli Nahi Mera Qasooor ..

Sara Ka Sara Hai Tera Fatoor ..

Mera Bharam Kuch Toa Rakhta Nahi ..

Aankhoon Mein Pal Bhar Toa Rukhta Nahi …

Nikley Na Dil Pe Toa Girta Hai Tu ..

Merey He Dil Pe Toa Marta Hai Tu ..

Najaney Woh Kia Boltey Phir Rahey …

Giley Sarey Unko Aaaghi Se Rahey..

Yunhi Daf’atan Meinne Nafrat Ko Dekha..

Sab Se Alag Thi Woh Kharri ..

Ankhoon Mein Iski Thi Ek Jhar’ri ..

Meinne Poocha Abh Kia Kehti Hai Tu ?

Yun Sab Se Juda Kyun Rehti Hai Tu ?

Forun He Is ne Dia Ye Jawaab ..

Khulla Jis se Merey Mannn Ka Gulaab ..

Kaha Mujse Nafrat Kyun Kartey Ho Tum?

Har Pal Muhabbat Ka Dam Bhartey Ho Tum?

Par Mujhko Nahi Kuch Iski Parwah ..

Magar La ilmi Aray Wah Re Wah ..

Muhabbat Mein Kuch Milawat Toa Hai ..

Aaj Kuch Isme Banawat Toa Hai ..

Magar Meri Kismat Hai Kitni Bharri ..

Mein Apney Jazbe Mein Hun Khari ..

Har Jazba Banawat Se BayMoal Hai ..

Yeh Nafrat Hai Aur Yeh Anmool hai ..

“Ishq” Bhe Tha Kahin Aas Paaas Khara ..

Isne Kaha mein Toa Hun Inteha ..

Azal Inteha Abdal Inteha ..

Mein Khush Hun Mujhko Parwah Nahi ..

Kahan Hai Muhabbat Kuch Bhi Parwah Nahi ..

Ishq He Mein Musalsal Jeyee Jaa Raha Hun …

Khudh Apni He Inteha Kiye Jaa Raha Hun ..

“Aakhir Mein Joa Meinne Chehra Tha Dekha..

Is Chehrey Mein Apna He Chehra Tha Dekha ..

Is Chehrey Ne Kuch Bhi Bataya Nahi …

Haal Kuch Bhi Dil Ka Sunaya Nahi …

Pagal Si Ho Ke Joa Panchchi Ko Dekha …

Tha pehley Joa Dekha Phir Abh Woh Na Dekha …

Kaha Usne Mujse Phir BayRabt …

Janti Nahi Isko Yeh Toa Hai “Zabt” …

This is one of my symbolic poem in which Different feelings are talking to each other as If these are beings who can see, feel and talk. These feelings are arguing with each other.. Hence in the end I so much relate to a feeling that is “Self Control” or “Tolerance”.

Written by : Tayyiba Iram

آج رات خیال کے بادل سے جب احساس کی بارش ہوئی
میری ملاقات بھی  اِک پاگل پنچھی سے ہوئی
اُسکے ساتھ تھے اُسکے ساتھی سب کے سب انجانے  تھے
پر مُجھ کو یہ محسوس ہوا وہ سب جانے پہچانے تھے
میرے من کا پنجرہ کھولا
پنچھی یکدم مجھ سے بولا
آ ! میں تجھ کو دکھلاؤں
کچھ احساسات سے ملواؤں
وہ احساسات مجسم تھے
ہونٹوں پہ انکے تبسّم تھے
آنکھیں انکی اداس تھی
جیسے کچھ ان کو آس تھی
اِک اِک کا چہرہ یاد نہیں
بس اِتنا مجھ کو یاد ہے
اِنکے کچھ احساس بھی تھے
انکے کچھ ارمان بھی تھے

محبّت کی آنکھوں میں آنسو بھی تھے
مانند لہو وہ آنسو  ہی  تھے
کچھ کہا نہیں بس وہ خاموش تھی
مگر یوں لگا وہ تو نردوش تھی

چاہت کو چاہت سے چاہت بھی تھی
مگر کچھ بھی کہنے کی ساعت نہ تھی
یہاں اِک گھڑی اِس کو راحت نہ تھی

جو دیکھا آگے تھا آنسو کھڑا
تھا جیسے خزاں میں پتا جھڑا
گلے سارے اسکو چاہت سے تھے
اور آنکھوں میں اسکی آنسو ہی تھے
کہا اس نے سنبھل کر مجھ سے یوں
محبّت کو مجھ سے عداوت ہے کیوں؟
کوئی دل جو اسکو پا جاتا  ہے
مجھے وہ نہ پائے تو کیا جاتا ہے ؟

محبّت یہ بولی نہیں میرا قصور
سارا کا سارا ہے تیرا فتور
میرا بھرم کچھ بھی تو رکھتا نہیں
آنکھوں میں پل بھر تُو رُکتا نہیں
نکلے نا دل پہ تو گرتا ہے تو
میرے ہی دل پہ تو مرتا ہے تو
نجانے وہ کیا بولتے پھر رہے
گِلے سارے اِنکو  آگاہی سے  رہے

یونہی دفتعًا میں نے نفرت کو دیکھا
سب سے الگ تھی وہ  کھڑی
آنکھوں میں اسکی تھی اک جھڑی
میں نے پوچھا اب کیا کہتی ہے تو؟
یوں سب سے جدا کیوں رہتی ہے تو؟
فوراً ہی اس نے دیا یہ جواب
کھلا جس سے میرے من کا گلاب
کہا مجھ سے نفرت کیوں کرتے ہو تم
ہر پل محبّت کا دم بھرتے ہو تم
پر مجھ کو نہیں کچھ اسکی پرواہ
مگر لا علمی ارے واہ رے واہ
محبّت میں کچھ ملاوٹ تو ہے
آج کچھ اس میں بناوٹ تو ہے
مگر میری قسمت ہے کتنی بھری
میں اپنے جزبے میں ہوں کھڑی
ہر جذبہ بناوٹ سے بے مول ہے
یہ نفرت ہے اور یہ انمول ہے

عشق” بھی تھا کہیں آس پاس کھڑا”
اس نے کہا میں تو ہوں انتہا
ازل انتہا ابد انتہا
میں خوش ہوں مجھ کو پرواہ نہیں
کہاں ہے محبّت کچھ  بھی پرواہ نہیں
عشق ہی میں مسلسل جئے جا رہا ہوں
خود اپنی ہی انتہا کئے جا رہا ہوں

آخر میں جو میں نے چہرہ تھا دیکھا
اس چہرے میں اپنا ہی چہرہ تھا دیکھا
اس چہرے نے کچھ بھی بتایا نہیں
حال کچھ بھی دل کا سنایا نہیں
پاگل سی ہوکے جو پنچھی کو دیکھا
تھا پہلے جو دیکھا پھر اب وہ نہ دیکھا
کہا اس نے مجھ سے پھر بے ربط
جانتی نہیں اسکو یہ تو ہے ضبط

تحریر : طیبہ اِرّم

11 Responses to Feelings Of “Feelings” By Tayyiba Iram

  1. waqarbangash says:

    splendid

  2. faisal says:

    Your poetry is really amazing

  3. Yousuf Rafi says:

    Bohat khoob.. its veryyy touching yaarr … Wooohhhhhhh!!!

  4. Boht Khoob ! Nazuk Ehsaasat, Refined !

  5. Rashid mehmood bhutta says:

    Ur poetry is heart touching

  6. amaraahmed says:

    Bhot hassas tehreer!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s